Won’t You?


Scars of you

Are expiring me, dear

Won’t you ask?

“Does it hurt you?”


Shedding tears for you

Feels the worst lament, dear

Won’t you say?

“Did I make you cry?’’


By the all, I always forget

And say, “Oh, You’re gone, dear”

Won’t you accept?

“Yes, I just lied beautifully”


Give me a day or a moment

To ask or spit out the emotions, dear

But I know what you will say

“It wasn’t my mistake that you believed my lie”



اکثر مصائب سے دو چار رہتا ہوں


اکثر مصائب سے دو چار رہتا ہوں

ہر بار درد میں مسکرا دیتا ہوں

یہ بہادری نہ سہی، کمزوری ہی سہی


اکثر احساسات بیان کر جاتا ہوں

ہر بار رو کر اپنی رواداد سنا دیتا ہوں

یہ برداشت نہ سہی، پیار کی پیاس ہی سہی


اکثر دھوکا کھا جاتا ہوں

ہر بار لوگوں کے راز چھپا جاتا ہوں

یہ معصومیت نہ سہی، بیوقوفی ہی سہی


دو چار رہتا ہوں، بیان کر دیتا ہوں

دھوکا کھا کر چھپا بھی لیتا ہوں

تھوڑا مسکرا کر قسمت پہ رو بھی دیتا ہوں


پر پھر بھی اکیلا رہ جاتا ہوں

خدا کو بے بسی میں کہہ بھی ڈالتا ہوں

کہ زندگی نہ سہی، تو پھر موت ہی سہی